نیپالی وزیراعظم نے دکھائے بھارت کو تیور، ایک انچ زمین بھی نہیں دینگے

Kalapani, kalapani India Nepal, India Nepal relations, jammu kashmir bifurcation, india new map, india map jammu kashmir, nepal border india map

بھارت کے ذریعے جاری کیے گئے نئے سیاسی نقشہ جس میں جموں و کشمیر اور لداخ کو مرکز زیرانتظام علاقہ دکھایا گیا ہے جبکہ کالاپانی کو ہندوستانی علاقہ ظاہر کیا گیا ہے جس کے بعد نیپال میں بے چینی دیکھی گئی۔

Map row: Nepal prime minister urges India to immediately withdraw its Army from Kalapani

نیپال کے وزیراعظم کے پی اولی نے اتوار کے روز کہا کہ ‘ بھارت-نیپال-تبت کے درمیان ٹرائی جنکشن میں واقع کالاپانی کا علاقہ نیپال کا حصہ ہے اور بھارت کو وہاں سے اپنی فوج فوری طور پر واہس بلالینی چاہیئے۔

Image result for nepal prime minister says on indian map

انہوں نے مزید کہا کہ ان کی حکومت اپنے ملک کی سرحد کی حفاظت کرنے میں پوری طرح آزاد ہے۔ فوج اپنے ملک کی حفاظت اور اپنی زمین پر حق واپس پانے کے لیے متحد ہیں۔

ہندوستان نے اپنا نیا سیاسی نقشہ جس میں جموں و کشمیر اور لداخ کو مرکز زیرانتظام علاقے دکھایا گیا ہے، جاری کردیا تھا لیکن نیپال نے اس پر اعتراض کیا تھا کہ کالاپانی کو ہندوستانی علاقہ ظاہر کیا گیا ہے۔ اس کا کہنا ہیکہ کالاپانی کا علاقہ نیپالی سرزمین کا ایک حصہ ہے۔

نیپال کے اعتراض کا جواب دیتے ہوئے وزارت خارجہ کے ترجمان رویش کمار نے کہا تھا کہ کالاپانی کا علاقہ ہندوستانی سرزمین کا حصہ دکھایا گیا ہے اور یہ بالکل درست ہے کیونکہ یہ ہندوستانی سرزمین کا خودمختار علاقہ ہے جس کا مطلب نیپال کے ساتھ سرحد پر ترمیم نہیں ہوتا۔

Leave A Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *